جمعرات, مئی 14, 2015

محسن نقوی۔۔

0 comments


لوح قرطاس نہ پھر دست قلم کار  جُدا
ہر کہانی کے مگر ہوتے ہیں کردار  جُدا ۔۔

دل بدل جائیں تو رستے بھی بدل جاتے ہیں
در جدا ہوں تو اٹھا لیتے ہیں دیوار  جُدا ۔۔

    سازیشیں   لاکھ کریں دشمن لیکن
کر پائے گا کبھی مجھ سے میرا یار  جُدا ۔۔

اشک آنکھوں میں لئے ڈھونڈ رہے ہیں ہم کو
میرے غم خوار الگ، تیرے طلب گار  جُدا ۔۔

وادی ء عشق میں ہے کیا خوب تماشا محسن۔
     لذت ہجر  جدا،  وسل کے آزار  جُدا ۔۔۔



0 comments: