جمعرات, نومبر 20, 2014

تھر اور ہمارے اجتماعی احساس کی موت

0 comments


  تھر سندھ  کاموت اُگاتا صحرا اور وفاقی و صوبائی حکومتوں کی مشترکہ بے حسی۔ خصوصاًحکومت سندھ  کا غیر سنجیدہ رویہ قابل مذمت ہی نہیں قابل گرفت بھی  ہے۔ اگران کے بیانات پڑھے جا ئیں تو شرم سے سر جھک جاتا ہے۔ وفاقی حکومت کو  اس  معاملے سے کوئی دلچسپی ہی نہیں ایسے لگتا ہےکہ تھر  وفاق کی عملداری  میں نہیں  آتا۔
 حضور اکرم   صحابہ کرام  اور  اولیاء  اللہ  کے معمولات  زندگی کا  مطالعہ کیا  جائے تو یہ بات جا بہ جا پڑھنے  کو ملے گی کہ جب بھی کوئی حاجت مند آتو تو  خالی  واپس نہ جاتا تھا حتیٰ کہ کئی روزہ  فاقے کے باوجود اپنا دسترخوان پہ موجود روکھا سوکھا کھانا  بھی صدا دینے والےکو بھجوا دیا جاتا۔                                                                                                                                      مگر یہاں کئی برسوں سے بھوک جھیلتی  مائیں  اور انکے فاقہ زدہ رحموں میں پلتی نئی زندگیاں جو ماوں  کی  کوکھ سے خوراک کشید کرنے کے حق سے محروم کر  دی  گئی  ہیں۔ زچگی  جیسے پیچیدہ  اور جان لیوا عمل کے بعد خوراک اور ادویات  کی عدم دستیابی نے اس مبارک عمل کو  ایسے  جرم میں  بدل  دیا  ہے جس کی  سزا  فاقہ کشی اورکسمپرسی کی موت ٹہری۔
           دوسری طرف ارباب اختیار کے دمکتے چہروں، بھرے پیٹوں، پیسے سے لد پھد  بنک اکا ونٹس، آسودہ حال زندگی کی رنگا رنگی سے ظاہر ہے کہ وہ موت تو کیا خدا کو بھی  بھلا  بیٹھے  ہیں۔ موت کے شکنجے  میں جکڑے  اپنے  ووٹرز  کی  حا لت  زار  پر لفظی تعزیت کے سواء  کچھ نہ کر رہے۔ دیگر سیاسی جماعتیں پریس بریفنگ کے  ہتھیار  کو سیاسی مفادات کے لیے استعمال کر رہی  ہیں۔
               حکومتی ادروں  کی سرگرمیاں محض  خانہ پری  ہے ناقص  غذا  اور  ادویات  اوراس  بڑھ  کر اہلکاروں کا  توہین آمیز رویہ ۔رہی انسانی حقوق کی علم بردار تنظیمیں  تو انکی  پھرتیاں بس اس حد تک ہیں  کہ  فوٹو بن جائیں تاکہ ڈونرز مطمئین رہیں۔ اگر تھر کے  باسیوں کے لیے کسی کی کوششیں قابل ستا ئش ہیں تو وہ مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے  والی  فلاحی تنظیمیں ہیں جنھوں نے  بلا تفریق مذہب شاندارکام کیا  ہے ۔ وفاقی  اور صوبائی حکومتیں اگر ایمرجنسی  نافذ کر کے مناسب اقدامات کرتیں  تو  نتیجہ  یقییناً  مختلف ہوتا۔ مگر  ابھی تک یہ حال ہے کہ  ادویات تو  ایک طرف پانی  اور کھانا  ملنا بھی محا ل ہے۔

             صرف  تھر نہیں ملک میں موجود باقی ریگزاروں  مثلاً چولستان تھل اور  بلوچستان کا  صحرائی علاقہ کا حال بھی کچھ مختلف نہیں ہے۔ ارباب اختیار سے درخواست ہے خدارااس صورتحال سے  نمٹنے کے لیے سنجیدہ 
  اقدامات کیے جائیں۔                         

0 comments: